جب تک ایک بھی مہاجر زندہ ہے کہ بانیان پاکستان کی لازوال قربانیاں ہمیشہ یاد رکھی جائیں گی، الطاف حسین

جب تک ایک بھی مہاجرزندہ ہے کہ بانیان پاکستان کی لازوال قربانیاں ہمیشہ یاد رکھی جائیں گی، الطاف حسینمتحدہ قومی موومنٹ کے قائد جناب الطاف حسین نے مولانا حسرت موہانی کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاہے کہ جب تک ایک بھی مہاجرزندہ ہے کہ بانیان پاکستان کی لازوال قربانیاں ہمیشہ یاد رکھی جائیں گی۔ رئیس الاحرار اورتحریک آزادی کے جید رہنما مولانا حسرت موہانی کی 66 ویں برسی کے موقع پر اپنے ایک بیان میں جناب الطاف حسین نے کہا کہ تحریک آزادی اور تحریک پاکستان کی جدوجہد میں مولاناحسرت موہانی کا کردار ناقابل فراموش ہے، مولانا حسرت موہانی تحریک پاکستان کے ان عظیم رہنماؤں میں شامل ہیں جنہوں نے برصغیر کے مسلمانوں کو انگریزوں کی غلامی سے نجات دلائی اورآزادی کے حصول کیلئے قید و بند کی صعوبتیں برداشت کیں اور اپنی انقلابی شاعری سے برصغیرکے مسلمانوں میں آزادی کا جذبہ بیدار کیا۔ جناب الطاف حسین نے کہا کہ تحریک آزادی کے دوران حریت پسندوں کی مخبریاں کرکے جاگیریں حاصل کرنے والے آج  پاکستان کے سب سے بڑے ٹھیکیدار بن چکے ہیں اور بانیان پاکستان اوران کی اولادوں کی قربانیوں کو فراموش کرکے احسان فراموشی کا عمل کررہے ہیں۔جناب الطاف حسین نے کہا کہ پنجابی اسٹیبلشمنٹ کے تعصب اورنفرت کا یہ عالم ہے کہ آج پاکستانی میڈیا میں نہ تو بانیان پاکستان کا دن منایا جاتا ہے اورنہ ان کی قربانیوں کو یاد رکھا جاتا ہے جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے ۔جناب الطاف حسین نے کہا کہ یہ مسلمہ حقیقت ہے کہ جوقومیں اپنے محسنوں کوفراموش کردیتی ہیں تاریخ میں انکا نام ہمیشہ ہمیشہ کیلئے مٹ جاتا ہے ۔ جناب الطاف حسین نے مولانا حسرت موہانی کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ بانیان پاکستان کی اولادیں اپنے اسلاف کی قربانیوں کو ہرگز رائیگاں نہیں جانے دیں گی اور جب تک ایک بھی مہاجر زندہ ہے بانیان پاکستان کی لازوال قربانیوں کو کبھی فراموش نہیں کیاجائے گا اور ان کی قربانیاں ہمیشہ یاد رکھی جائیں گی ۔