میرے بارے میں پھیلائی گئی تمام افواہیں سراسرجھوٹی ہیں ، افواہیں پھیلانے والے دراصل ایم کیوایم کو کمزوردیکھنا چاہتے ہیں۔ندیم نصرت

متحدہ قومی موومنٹ کے کنوینرندیم نصرت نے کہاہے کہ میرے بارے میں پھیلائی گئی تمام افواہیں سراسرجھوٹی ہیں ، میری انٹرنیشنل سیکریٹریٹ میں موجودگی میرے بارے میں پھیلائی گئی تمام افواہوں کی تردیدہے۔انہوں نے یہ بات پیرکی شام ایم کیوایم انٹرنیشنل سیکریٹریٹ لندن میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اس موقع پر رابطہ کمیٹی کے ارکان ڈاکٹرندیم احسان، قاسم علی رضا، مصطفےٰ عزیزآبادی اورڈاکٹرسلیم دانش بھی موجودتھے۔ندیم نصرت نے کہاکہ بیماری کسی بھی فردکانجی اورذاتی معاملہ ہے جسے اچھالنانہیں چاہیے ، گزشتہ دنوں میں نے باقاعدہ وڈیوبریفنگ میں بتایاکہ مجھے علالت کے باعث علاج کے لئے رخصت پر جاناہے ،میں اپنے علاج کے لئے امریکہ گیاتھالیکن سرکاری ایجنسیوں کی ایماء پر میڈیا کے بعض حلقوں نے میرے بارے میں افواہوں کابازار گرم کیا گیااور طرح طرح کی افواہیں پھیلائی گئیں کہ میں نے پارٹی چھوڑدی ہے، انہوں نے کہاکہ آج میں سیکریٹریٹ میں موجود ہوں اور میری موجودگی تمام افواہوں کی تردید ہے۔ندیم نصرت نے کہاکہ میرے بارے میں افواہیں پھیلانے والے دراصل ایم کیوایم کوکمزوردیکھناچاہتے ہیں تاکہ مہاجروں کے حقوق کی جس جدوجہد کاآغازقائدتحریک الطاف حسین نے کیاہے اس کونقصان پہنچایاجائے ۔ انہوں نے کہاکہ مہاجروں کے خلاف ناانصافیوں کاآغازقیام پاکستان کے بعدسے ہی ہوگیاتھا، بھٹونے جنرل ایوب خان اورجنرل یحییٰ کے ساتھ ملکرمہاجروں کوسول سروسزسے نکالا،کوٹہ سسٹم نافذ کرکے مہاجروں پر اعلیٰ تعلیم اورفوج ، پولیس اورسول سروسز میں ملازمتوں کے دروازے بندکئے ، نیشنلائزیشن پالیسی کے نام پر مہاجروں سے ان کی قائم کردہ صنعتیں اورتعلیمی ادارے چھین لئے گئے ، مہاجرنوجوانوں نے ملازمتوں کے دروازے بندکئے جانے پربیرون ملک جانے کاراستہ اختیارکیا اور ناانصافیوں کے خلاف جدوجہدکرنے کے بجائے انہیں اپنی قسمت سمجھ لیاتھااورذہنی غلامی میں چلے گئے۔ قائدتحریک الطاف حسین نے ان ناانصافیوں کے خلاف تحریک قائم کرکے عملی جدوجہدکاآغاز کیا۔انہوں نے کہاکہ آج بھی مہاجروں کے ساتھ تیسرے درجے کے شہریوں جیساسلوک کیاجارہاہے، مہاجروں پر اعلیٰ ملازمتوں کے دروازے بندہیں،سرکاری ملازمتوں کے اشتہارات میں مہاجروں کیلئے صرف چوکیداراور خاکروب کی ملازمتیں ہیں جبکہ اعلیٰ گریڈ کی ملازمتیں صرف پنجاب اوردیہی سندھ سے تعلق رکھنے والے افرادکے لئے مخصوص ہیں۔کراچی کی آدھی آبادی کومردم شماری سے کاٹ دیاگیا ہے اور مہاجروں کے ساتھ یہ تیسرے درجے کے شہریوں جیساسلوک اسلئے کیاجارہاہے کیونکہ کراچی میں اسٹیبلشمنٹ نے پی ایس پی ،مصطفےٰ کمال اور حقیقی کی شکل میں ایسے ٹولے تشکیل دیدیے ہیں جواسٹیبلشمنٹ کے آلہ کار بنکرمہاجروں کے حقوق کی جدوجہدکوکچلنے اورانہیں غلام بنانے میں حصہ داربنے ہوئے ہیں۔ ایم کیوایم کے لوگوں کودھمکیاں دے اوربلیک میل کرکے پی ایس پی میں شامل ہونے پرمجبورکیاجارہاہے۔ انہوں نے کراچی کے ڈپٹی میئر ارشدوہرہ کی پی ایس پی میں شمولیت کاذکرکرتے ہوئے کہاکہ ارشدوہرہ کوبھی منی لانڈرنگ کے جھوٹے مقدمہ میں ملوث کرکے انہیں بلیک میل کرکے پی ایس پی میں شامل کرایا گیا،اسی طرح دیگرلوگوں کی بھی وفاداریاں تبدیل کرائی جارہی ہیں۔ ندیم نصرت نے کہاکہ قائدتحریک الطاف حسین نے اپنے تازہ ترین آڈیوپیغام میں بھی یہی کہاہے کہ شیخ مجیب الرحمن ملک توڑنانہیں چاہتاتھا، بھٹونے اقتدارکی ہوس میں فوج کے ساتھ ملکر ملک کوتوڑدیالیکن ملک توڑنے میں ملوث کسی ایک بھی فوجی جرنیل کوسزانہیں دی گئی جبکہ محض پاکستان مردہ باد کانعرہ لگانے پر قائدتحریک الطاف حسین کوغدارقراردیکرمہاجروں پر ظلم وستم کے پہاڑ توڑدیے گئے ۔
انہوں نے کہاکہ آج مسلم لیگ ن والے کہہ رہے ہیں کہ انہیں ’’ مائنس نوازشریف ‘‘ فارمولاقبول نہیں ہے، برسوں سے مائنس الطاف حسین کی باتیں کی جارہی ہیں اوراس کے لئے سازشی ہتھکنڈے اختیارکئے جارہے ہیں لیکن کسی کی آنکھیں نہیں کھلیں،انہوں نے کہاکہ اگرپنجاب میں بھی خدانخواستہ نوجوانوں کی مسخ شدہ لاشیں مل رہی ہوتیں توشائد انہیں مہاجروں اوربلوچوں کے دکھ کااندازہ ہوتا۔انہوں نے کہاکہ مسلم لیگ ن والے اگرواقعتا سیاست میں اس مائنس ون فارمولے کے مخالف ہیں توانہیں چاہیے کہ وہ کھل کرآواز بلندکریں کہ مائنس الطاف حسین کی پالیسی بھی غلط ہے ، مہاجروں کی اس قیادت کوبھی سیاسی آزادی دی جائے۔ ندیم نصرت نے کہاکہ ایم کیوایم تمام قومیتوں اورتمام غیرمسلموں اورمذہبی اقلیتوں کوبرابرکاپاکستانی سمجھتی ہے لیکن ایم کیوایم کوختم کرکے پاکستان کی واحدلبرل آوازکوختم کرنے کی کوشش کی جارہی ہے،آج صرف ایم کیوایم کے کارکنوں اورمہاجروں اوربلوچوں ہی کونہیں بلکہ شیعہ نوجوانوں کوغائب کیاجارہاہے، گلگت بلتستان کے عوام کے حقوق کے لئے آوازبلندکرنے والے اہل تشیع افرادکوبھی غائب کیاجارہاہے، وہاں باہرسے لائے گئے لوگوں کوبساکروہاں کی ڈیمو گرافی تبدیل کی جارہی ہے ۔ ندیم نصرت نے کہاکہ مہاجروں کوغلام بنانے کی سازش کی جارہی ہے لہٰذ ا وقت کاتقاضہ ہے کہ تمام مہاجروں کوچاہیے کہ وہ آپس کے فروعی اختلافات کوختم کرکے قائدتحریک الطاف حسین کی قیادت میں متحد ہوجائیں اوراپنے گھرکومضبوط کریں۔